Corruption

برف کی کاشت

افطاری کی ایک تقریب میں شاہ صاحب سے ملا قات ہوئی، انہوں نے بڑی گرمجوشی سے مجھے گلے لگا لیا۔میزبان نے حیرت سے کہا”آپ تو ایک دوسرے کو پہلے سے جانتے ہیں۔” تو جواباً عرض کیا کہ ”میں شاہ صاحب کو نہ صرف جانتا ہوں بلکہ دل سے ان کی قدر بھی کرتا ہوں۔ان کا تعلق ان چند سیاست دانوں سے ہے جو کبھی اصول پر سمجھوتہ نہیں کرتے،جنہوں نے ہمیشہ ایمانداری،خلوص اورنیک نیتی کوزادِ راہ جانا، جنہوں نے ہر دور میں سیاست کوکچھ نہ کچھ دیا، اس سے وصولی کی کوشش نہیں کی۔” شاہ صاحب نے میراشکریہ اداکیااورہم دونوں ایک کونے میں بیٹھ گئے۔ شاہ صاحب اپناسیاسی اتارچڑھاؤ بتانے لگے،انہوں نے سیاست کیسے شروع کی،الیکشن کیسے لڑا،کیسے وزیربنے رشوت اورلوٹ کھسوٹ سے بچنے کیلئے انہیں کون کون سے پاپڑ بیلنے پڑے۔انہیں الیکشن میں کیسے ہروایا گیااورآخر میں انہوں نے پارٹی کیسے چھوڑی،وغیرہ وغیرہ۔
میں نے ایک بار پھران کی ایمانداری کی تعریف کی،انہوں نے تڑپ کر میری طرف دیکھا اور ٹھنڈے ٹھار لہجے میں بولے”میں اپنی اس ایمانداری،اس اصول پسندی اور اخلاص پرشرمندہ ہوں۔”میں نے انہیں حیرت سے دیکھا،وہ گویاہوئے تجربے اوروقت نے ثابت کیااس ملک میں جن لوگوں نے کچھ کمالیاوہی صحیح رہے،جنہوں نے موقع کھو دیا وہ پچھتاتے رہے،دیکھ لیں ایمانداری کا صلہ،آج میرے ہاتھ میں سیاست ہے نہ ہی مال”۔ہم دیرتک اس شرمندگی اورپچھتاوے پر گفتگو کرتے رہے۔ شاہ صاحب نے بیسیویں مثالیں دیں،لوگ کیسے خالی ہاتھ سیاست میں آئے،وقت اور موقع سے فائدہ اٹھایا،فرش سے عرش تک جا پہنچے اور آج عیش کر رہے ہیں۔احتساب کے درجنوں محکمے بنے،ان کے خلاف کیس اور ریفرنس بھی دائر ہوئے لیکن انہیں کوئی فرق نہیں پڑا،ان میں سے کچھ نے دے دلا کر جان چھڑالی اور کچھ مک مکا کرکے ایک دفعہ پھر ایماندار سیاستدان کا تمغہ حاصل کر چکے۔چند ایک حضرات قانون کے مورچے میں پناہ گزیں ہوئے لیکن بالآخر انہوں نے بھی وفاداریاں تبدیل کرکے جان اور مال بچا لئے اور پیچھے رہ گئے ہم جیسے بے وقوف! جن کا دامن خالی تھااور خالی ہے،وہ گھاٹ کے رہے اور نہ ہی انہیں گھر نصیب ہوا۔
میر صاحب ایک ریٹائرڈ بیوروکریٹ تھے۔۴۰ سال اقتدار اور اختیار کے کوریڈور میں رہے،کس کس قیمتی پوسٹ اور کیسےکیسے سنہرے عہدے پر رہے لیکن کیا مجال کہ ایمان اور ایمانداری کو ہا تھ سے جانے دیاہولہندا جب ریٹائر ہوئے تو سر چھپانے کیلئے چھت تک نہیں تھی،جو پس انداز تھا وہ کواپریٹو بینک لے اڑا، اور زندگی انہوں نے پنشن اور دکھ میں گزار دی۔ہر صبح بیوی کے طعنوں اور اولاد کے شکوؤں سے آنکھ کھلتی اور رات کو حالات کے بوجھ اور ضروریات کی گرانی تلے بند ہوتی،میر صاحب نے بھی آخری زندگی پچھتاوے میں گزاری،وہ بھی کہا کرتے تھے”نیکی بندے کو وہاں کرنی چاہئے جہاں نیکی کی کوئی وقعت ہو،جس معاشرے میں ایمانداری کا دوسرا نام بے وقوفی ہو وہاں ایمانداری سے پر ہیز لازم ہے،افسو س مجھے دورانِ ملازمت اس بات کا احساس تک نہ ہوا۔”
یہ شاہ صاحب ہوں یا میر صاحب،ہمارے معاشرے میں ایسے کردار بکھرے پڑے ہیں،ہم سب کی زندگی میں کوئی نہ کوئی شاہ صاحب،کوئی نہ کوئی میر صاحب ضرور ہوں گے، یہ لوگ پہلے اکثریت میں ہوتے تھے لیکن اب اقلیت کی شکل اختیار کرتے جا رہے ہیں۔ہر آنے والا دن ایسے لوگوں کی نعشوں پر طلوع ہو رہا ہے،وہ لوگ جو کبھی ضمیر کو عدالت سمجھتے تھے،جنہیں محسوس ہوتا تھاسب آنکھیں بند ہو جائیں توبھی ایک آنکھ انہیں مسلسل دیکھتی رہتی ہے،جو یہ سوچتے تھے دنیا عارضی کھیل ہے اور اس کھیل میں سب کچھ ہار دینا بے وقوفی ہے اور جو یہ کہتے تھے اطمینان سے بڑی کوئی دولت اور سچائی سے بڑی کوئی طاقت نہیں ، وہ لوگ اس معاشرے سے سمٹتے جا رہے ہیں،یہ معاشرہ ، یہ ملک ان لوگوں سے خالی ہوتا جا رہا ہے ،اس ملک میں ایمانداری کی زمین بڑی تیزی سے سیم اور تھور کا شکار ہوتی جا رہی ہے۔Corruption
جاپان میں زمین نہیں لہندا سبزہ اور ہریالی بھی نہیں لیکن جاپانیوں نے ایک عجیب عادت پال رکھی ہے،انہیں گھر،دفتر یا دوکان کا کوئی بھی کنارہ خالی ملتا ہے وہ اس میں بیج بو دیتے ہیں،وہاں پودا لگا دیتے ہیں۔جاپان دنیا کا واحد ملک ہے جس میں آپ کو گملوں میں سبزی ملتی ہے ۔میں نے ایک جاپانی سے وجہ دریافت کی تو اس نے ہنس کر کہا”ہم جانتے ہیں کہ ہمارے ملک میں ہریالی کم ہے لہندا ہم ہریالی بڑھانے کی کوشش کرتے رہتے ہیں۔ہم جانتے ہیں کہ ہم سبزیاں درآمد کرتے ہیں لہندا ہم کوشش کرتے ہیں کہ ہم ایک ٹماٹر،ایک آلو اور مٹرکی چندپھلیاں ہی سہی،کچھ اگائیں،کچھ تو اپنا کھائیں۔”یاد رہے جب جاپانی جوڑوں میں کوئی غلط فہمی پیدا ہو جائے تو صلح کے دن وہ اپنے گھر کی کوئی نہ کوئی چیز دستر خوا ن پر ایک نعمت کے طور پر ضرور سجاتے ہیں۔
ہمارے ملک میں این آر او نے ایمانداری،سچائی اور خلوص کاجنازہ نکال کررکھ دیااوراب یہ اوصاف ڈھونڈنے سے بھی نہیں ملتے۔سیاست دانوں نے این آر او کو اپنے لئے ایک مثال بنا کر ایسی کھلے عام لوٹ مچا ئی کہ الامان الحفیظ!پہلے ہی الزمات اور انکشافات کی ایسی غلیظ تھیلی بیچ چوراہے میں پڑی تھی کہ بدیانت سیاستدان کی تاجپوشی پرقوم سکتے میں ہے۔ سیاست میں بھی کئی آدھے سچ اور جھوٹ شامل کرکے قوم کی توجہ ان خطرات سے ہٹا دی گئی ہے جس کی آگہی سے عوام کو اپنے وطن کے بارے میں اپنے دوستوں اور دشمنوں کی تمیز ہو رہی تھی۔
ہمارے ملک میں پہلے ہی ایمانداری ،وفاداری اور خلوص ختم ہو تا جا رہا ہے لہندا ہمیں بھی گھروں،دوکانوں اور دفتروں میں ان ختم ہونے والی صفات کے بیج بونے چاہئے،گملوں میں اس کی پنیر یاں لگانی چاہئیں۔یہ لوگ جو پچھتاوے کی سڑک پر قدم رکھ رہے ہیں ان کیلئے بھی کچھ نہ کچھ کرنا چاہئے۔ ہم اگر انہیں کچھ دے نہیں سکتے تو کم از کم ان کا حوصلہ تو ضرور بڑھا سکتے ہیں،ان کو عزت تو دے سکتے ہیں،ان کی نیکی اور ایمانداری کا اعتراف تو کر سکتے ہیں،لوگ بجھتے چراغوں کی پھڑ پھڑاتی لو بچانے کیلئے اپنے ہاتھ جلا بیٹھتے ہیں،ہم کیسے لوگ ہیں ہمارے سامنے زندگی کے بھانبھڑ میں برف کاشت کی جا رہی ہے لیکن ہم خاموشی سے تماشہ دیکھ رہے ہیں۔
کوئی شخص درخت کاٹ رہا تھا،کسی راہ گیر نے احتجاج کیاتو درخت کاٹنے والے نے کلہاڑی کندھے پر رکھ کر پوچھا”یہ سڑک اور درخت تمہارا ہے؟” راہ گیرنے جواب دیا”نہیں ،لیکن میں یہاں سے روز گزرتا ہوں،مجھے معلوم ہے دس سال بعد میرا بیٹا بھی یہاں سے گزرے گااگر میں آج احتجاج نہیں کروں گا،اس درخت کو کٹنے سے نہیں بچاؤں گا تو کل میرا بیٹا اس کے سایہ سے محروم ہو جائے گا،یہ سڑک اس کیلئے جہنم بن جائے گی۔”
یادرکھئے!اگر ہم نے بھی ایمان اور نیکی کے ان چراغوں کی حفاظت نہ کی تو ہماری اولاد نیکی اورایمان کے الفاظ تک سے واقف نہیں ہو گی۔یہ معاشرہ یہ ملک”کامیاب” لوگوں کا ملک،موقع سے فائدہ اٹھانے والے لوگوں کامعاشرہ ہوگا،یہ سڑک جہنم بن چکی ہو گی۔ہمیں فی الفور ان لکڑ ہاروں کا محاسبہ کرنا ہو گا جو ہمارے ملک کے تمام درختوں کو کاٹنے کیلئے کندھے پر کلہاڑیاں لئے تیار کھڑے ہیں لیکن اس کاکیاکریں کہ جب کلہاڑا (امریکا) جنگل میں درخت(مسلمانوں)کاٹنے آیا، تو درخت تڑپ کربولے: کلہاڑی کا دستہ (مسلمان لیڈر) ہم میں سے ہے۔

تعارف سمیع اللہ ملک

سمیع اللہ ملک پاکستان کے مانچسٹر فیصل آبادمیں ۵/اکتوبر ۱۹۵۱ء کو پیدا ہوئے۔ابتدائی تعلیم بھی وہی حاصل کی۔ بنیادی طور پر سول انجینئر ہیں ۔لاہور کی انجینئرنگ یونیورسٹی سے ۱۹۷۰ء میں گولڈ میڈل کے ساتھ ڈگری وصول کی۔ بعد میں اعلیٰ تعلیم کے لئےامریکا چلے گئے۔ اور وہاں دنیا کی سب سے بڑی یونیورسٹی میسوچوسٹس ایمحرسٹ سے اسٹرکچر میں ماسٹرز(ایم ایس سی)کی ڈگری لی اوروہ پاکستان کے تیسرے شخص تھے جنہوں نے یہ ڈگری حاصل کی۔بعد ازاں اسٹرکچر میں ہی پی ایچ ڈی کرکے سائوتھ ایشیاکے دوسرے انجینئر ہونے کااعزازحاصل کیا۔ امریکا ہی کی ایک بین الاقوامی کمپنی میں براہ راست بطور کنسلٹنٹ شمولیت سے اپنے کیریئر کا آغاز کیا اوراسی کمپنی میں زندگی کے۳۵ سال گزار دیئے اور ڈائریکٹرکے عہدے سے مستعفی ہوئے۔ کویت،سعودی عرب اوربحرین میں بین الاقوامی پراجیکٹس پراپنی فنی خدمات سرانجام دے چکے ہیں۔اب بھی کئی بین الاقوامی کمپنیوں میں مشاورت کے فرائض سرانجام دے رہے ہیں ۔ لندن برطانیہ میں ہی ذاتی کنسلٹنٹ فرم کے مالک ہیں۔ پاکستان میں کالا باغ ڈیم اوردیگرکئی بڑے پراجیکٹس کی مشاورتی ٹیم میں رضاکارانہ طور پر اپنی خدمات سرانجام دیتے رہے۔ پاکستان ،لندن ،امریکا،بھارت ،کشمیر،جاپان اوردنیابھرمیں مختلف اخبارات وجرائد ان کے مضامین باقاعدگی سے شائع کرتے ہیں۔ اب تک انگریزی کی دو Bitter Truth اور Pakistan-Great Miracle ،عربی کی ایک’’خلافہ و شہادہ‘‘ اور اردو کی ستائیس کتب شائع ہوچکی ہیں ۱۔حدیثِ دل ۲۔ حدیثِ جاں ۳۔ حدیثِ حال ۴۔ حدیثِ ملت ۵۔حدیثِ قلم ۶۔ حدیثِ وقت ۷۔ حدیثِ قوم ۸۔ حدیثِ حق ۹۔ حدیثِ احوال ۱۰۔ حدیث چشم ۱۱۔ حدیث عمل ۱۲۔ حدیث کوہسار ۱۳۔ حدیث نعمت ۱۴۔ حدیث وطن ۱۵۔ حدیث خلق ۱۶۔حدیث جبل ۱۷۔ حدیث امروز ۱۸۔ حدیثِ کلام ۱۹۔ حدیثِ سحر ۲۰۔ حدیثِ شب ۲۱۔ حدیثِ اتّباع ۲۲۔ حدیثِ وفا ۲۳۔ حدیثِ فردا ۲۴۔ حدیث راز ۲۵۔ حدیث عشق ۲۶۔ حدیث زندگی ۲۷۔ حدیث راہ امریکامیں ۵سال اورکویت سعودی عرب اوربحرین میں ۱۰سال اوراب برطانیہ میں پچھلے ۳۲ سالوں سے مقیم ہیں ۔ یہاں ایک مشہور تھنک ٹینک لندن انسٹیوٹ آف ساؤتھ ایشیا کے ڈائریکٹرہیں۔ برطانیہ کےایک معروف ٹی وی چینل ''میسج''کے ڈائریکٹراورمشہورِ زمانہ پروگرام ''تجزیہ ''کے میزبان بھی ہیں۔میسیج ویب سائٹ اور یوٹیوب کے علاوہ تین درجن سے زائد ویب سائٹس پران کے پروگرام اورمضامین ملاحظہ کئے جاسکتے ہیں۔ان سے براہِ راست رابطہ کیلئے [email protected]

أضف تعليقاً

لن يتم نشر عنوان بريدك الإلكتروني. الحقول الإلزامية مشار إليها بـ *

يمكنك استخدام أكواد HTML والخصائص التالية: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>