آبی ذخائر پر پاک بھارت مذاکرات کا خیرمقدم کرتےہیں،وزیرپانی و بجلی

وفاقی وزیر پانی و بجلی خواجہ محمد آصف نے سندھ طاس معاہدے پر پاک بھارت انڈس کمیشن کی سطح پر مذاکرات کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ مذاکرات حکومت پاکستان کی کوششوں سے شروع ہوئے، کشن گنگا ڈیم پر ثالثی عدالت پاکستان کے حق میں فیصلہ دے چکی‘ عمل درآمد کے منتظر ہیں۔

 وہ پیر کو وزارت پانی و بجلی میں پاک بھارت سندھ طاس کمیشن کے دو روزہ مذاکرات کے حوالے سے پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ مجھے یہ بتاتے ہوئے خوشی ہورہی ہے کہ حکومت پاکستان کی کاوشوں سے سندھ طاس معاہدے پر بات چیت کا سلسلہ پھر سے شروع ہوگیا ہے۔ یہ مذاکرات مارچ 2015 سے تعطل کا شکار ہوگئے تھے جب پاکستان کی جانب سے کشن گنگا اور رتلے پاور پراجیکٹ پر کمیشن کی سطح کے مذاکرات کو ناکام قرار دیتے ہوئے ثالثی کی طرف جانے کا عندیہ دیا گیا۔ 14اور 15جولائی 2016 کو پاکستان کے سیکرٹری پانی و بجلی کے بھارتی ہم منصب سے نیو دہلی میں ہونے والے مذاکرات کے بعد پاکستان نے ان دو تنازعات پر ثالثی کا راستہ اپنایا۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں خوشی ہے کہ بالآخر بھارت اب سندھ طاس معاہدے کے تحت کمیشن کی سطح کے مذاکرات پھر سے شروع کرنے پر آمادہ ہوگیا ہے ہم بھارتی حکومت کے اس فیصلے اور بھارتی وفد کی پاکستان آمد کا خیر مقدم کرتے ہیں۔ وزیر پانی و بجلی نے کہا کہ پاکستان کا ہمیشہ یہ موقف رہا ہے کہ سندھ طاس معاہدہ ان چند عالمی معاہدوں میں سے ایک ہے جو دو ملکوں کے مابین آبی ذخائر کے استعمال سنجیدہ معاملات کو پرامن ذرائع سے طے کرنے کا طریقہ کار فراہم کرتا ہے اس معاہدے کی پاسداری اور اسکے ذریعے مسائل کا حل دونوں ملکوں کے مفاد میں ہے۔

Print Friendly

متعلق سرفرازاحمد عباسی