گورنمنٹ گرلز کالج خانیوال میں تقسیم انعامات کی یر وقار تقریب کا انعقاد

3 hours ago
0

؂ محنت کرے انسان تو کیا ہو نہیں سکتا
وہ کون سا عقدہ ہے جو وا ہو نہیں سکتا

گورنمنٹ گرلز کالج خانیوال میں تقسیم انعامات کی یر وقار تقریب کا انعقاد
تقریب تقسیم انعامات کسی ادارچ کی سب سے پر مسرت اور یروقار تقریب ہوتی ہے کیونکہ یہ ادارہ اور اہل ادارہ کے ذہنی،فکری،علمی،ادبی،نصابی،ہم نصابی اور غیر نصابی ارتقاء کی تاریخ ہوتی ہے،اس لئے گورنمنٹ پوسٹ گریجوایٹ کالج برائے خواتین خانیوال میں اس تقریب کا بہت اہتمام سے انعقاد کیا جاتا ہے۔
حسب معمول اس مرتبہ بھی نصابی،ہم نصابی اور غیر نصابی سرگرمیوں میں نمایاں کارکردگی کا مظاہرہ کرکے ادارہ کا نام روشن کرنے والی طالبات میں انعامات واسناد کی تقسیم کی یر وقار تقریب کا خصوصی اہتمام کے ساتھ انعقاد کیا گیا۔تقریب کی صدارت سربراہ ادارہ محترمہ پروفیسر مسز زینب مسعود صاحبہ نے کی۔مہمان خصوصی محترم مسعود مجید خان ڈاہا ،چیئرمین بلدیہ خانیوال تھے ۔مہمان اعزاز کالج کی سابقہ پرنسپل محترمہ پروفیسر مس عابدہ فاطمہ صاحبہ تھیں۔تقریب میں معروف سماجی کارکن ڈاکٹرعابدہ ظفر صاحبہ ،معروف صحافی امتیاز علی اسد صاحب اور انعامات حاصل کرنے والی طالبات کی ماؤں نے بھی خصوصی شرکت کی۔
نقابت کے فرائض راقم الحروف (مسز رضیہ رحمان صدر شعبہ اردو) اور مس حامدہ فاطمہ اسسٹنٹ پروفیسر تاریخ نے بہت خوبصورتی سے نبھائے۔دونوں نے تقریب کی مناسبت سے خوبصورت اشعارواقوال سے شرکائے تقریب سے داد وصول کی۔
تقریب کا باقائدہ آغاز امرین ریاض سال اول نے تلاوت کلام پاک سے کیا۔نعت پیش کرنے کی سعادت سال سوم کی طالبہ نعیم النساء نے حاصل کی۔بعد ازاں پرنسپل پروفیسر مسز زینب مسعود صاحبہ نے خطبہ استقبالیہ پیش کرتے ہوئے مہمان خصوصی محترم مسعود مجید خان ڈاہا ،مہمان اعزاز محترمہ پروفیسر عابدہ فاطمہ صاحبہ اور دیگر مہمانان گرامی کا شکریہ ادا کیا کہ انہوں نے اپنی گونا گوں مسروفیات میں سے وقت نکال کر تقریب کی رونق کو دوبالا کیا اور طالبات کی حوصلہ افزائی کی۔انہوں نے بورڈ،یونیورسٹی کے امتحانات میں نمایاں کامیابیوں،ہم نصابی وغیر نصابی سرگرمیوں میں ادارے کی طالبات کی شاندار کامیابیوں کا مختصر جائزہ پیش کیا۔انہوں نے انعامات حاصل کرنے والی طالبات،ان کی اساتزہ کرام اور ماؤں کو مبارک باد پیش کی اور امید ظاہر کی کہ وہ آئندہ بھی اسی محنت سے اپنا ،ادارچ اور والدین کا نام روشن کرتی رہیں گی۔انہوں نے کالج کو درپیش مسائل کا بھی ذکر کیا اور چیئرمین بلدیہ سے ان کے حل کی حتی الوسع کوشش کی درخواست کی۔
تعلیمی میدان میں مختلف امتحانات میں نمایاں کامیابی پر انعامات حاصل کرنے والی طالبات کے نام کچھ یوں ہیں:زائمہ سرفراز،رابعہ سردار،حنا اعجاز،عائشہ وفا،طاہرہ بتول،ازکیٰ کرن،ندرت یاسمین،سدرہ ارم،بشریٰ آصف،عائشہ قاسم،فوزیہ ریاض،سونیا رضا،صائمہ مجید،بشریٰ رفیق،مدیحہ رشید،اقراء نور،انیقہ شریف،نازیہ اسلم،ماریہ اختر،اریج فاطمہ،ساجرہ یاسین،سکینہ بی بی،ندا حنیف،نادیہ اقبال،آمنہ منیر،ثناء جبار،نجمہ نورین،سدرہ حمید،سیما علی،رابعہ نثار،ثناء فلک،ام کلثوم،ربیعہ سردار،اقراء وکیل،عظمیٰ سلیم،صبا اسلم،فضیلہ ناز،آمنہ بدر،حسیبہ ناز،مکر مہ سہیل،انعم جاوید،نبیلہ کوثر،کنول رانا،سدرہ کنول،شمائلہ کنول اور در شہوار۔
ہم نصابی سرگرمیوں میں یوتھ فیسٹیول میں اردو مقابلوں میں ضلعی وڈویژن کی سطح پر انعامات حاصل کرنے والی طالبات کے نام مندرجہ ذیل ہیں:اردو مباحثہ میں امرین ریاض سال اول،ام فروا سال چہارم،شمسہ کنول ایم۔اے ایجوکیشن،اردو مضمون نویسی میں عشرت سلیم سال دوم، سیدہ غانیہ منزہ سال چہارم، آمنہ حسن اور شاہدہ پروین ایم۔ایس۔سی نفسیات،اردو تقریر میں ثناء لطیف سال اول،عدیلہ حسنین سال سوم،نمرہ ارشاد ایم۔ایس۔سی نفسیات۔
انگریزی مقابلوں میں،انگریزی مباحثہ میں ماریہ خان سال دوم،تمدیح فاطمہ سال اول،ثانیہ سعید ایم۔اے انگریزی۔مضمون نویسی میں لائبہ طاہر سال اول،عدینہ سحریم،وردہ مہرین ،فرح مجید ،فائزہ کائنات ایم۔اے انگریزی،انگریزی تقریر میں نمرہ سجاد سال دوم،کشف دھول سال چہارم،فائزہ بتول ،ردا اختر،سیدہ شہربانو،ایم۔اے انگریزی۔نے ضلع اور ڈویژن کی سطح پر انعامات حاصل کئے ۔انگریزی مضمون نویسی میں ڈگری سطح کے مقالہ مضمون نویسی میں کالج کی طالبہ ماہ نور نعیم احسن سال چہارم نے ضلع اورڈویژن دونوں سطح کے مقابلوں میں اول پوزیشن حاصل کرکے صوبائی سطح کے مقابلے میں نہ صرف شرکت کی بلکہ اپنی اول پوزیشن برقرار رکھی۔ماہ نور نعیم احسن کالج کے شعبہ انگریزی کی صدر محترمہ مسز حمیرا نعیم صاحبہ کی صاحبزادی ہیں۔انگریزی مباحثہ میں بھی کالج کی سال چہارم کی طالبہ نے ڈگری سطح کے انگریزی مباحثہ میں ضلع اور ڈویژن میں اول پوزیشن حاصل کرکے صوبائی سطح کے مقابلے میں شرکت کی اور وہاں بھی اول پوزیشن برقرار رکھی۔
کالج ہذا کی سال سوم کی طالبہ نعیم النساء نے حسن قرات کے مقابلہ میں ضلع میں اول اور ڈویژن میں دوم پوزیشن حاصل کی،نیز نعیم النساء نے مقابلہ نعت خوانی میں ضلع میں بھی اول اور ڈویژن میں بھی اول پوزیشن حاصل کرکے صوبائی سطح کے مقابلہ میں شرکت کی۔ 
مہمان خصوصی محترم مسعود مجید خان ڈاہا صاحب نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میرا اس ادارے سے بہت پرانا تعلق ہے،اس ادارے کی بانی پرنسپل محترمہ پروفیسر عقیلہ خانم شاہ صاحبہ کے دور میں میں اس ادارے میں آیا تھا، میرا کیونکہ تعمیرات کے شعبہ سے تعلق ہے،آپ آج جس ہال میں تقریب کررہے ہیں ،میں اس کی تعمیر کے سلسلے میں آیا تھا۔ میڈم صاحبہ نے کہا کہ کوشش کریں کہ چھٹیوں میں اس کی تکمیل ہوجائے کیونکہ طالبات کی موجودگی میں مسائل پیدا ہوں گے،سو الحمد للہ میں نے ان کی بتائی ہوئی مدت میں اس ہال کی تعمیر مکمل کروائی۔انہوں نے کہا کہ تعلیم نسواں کی لڑکوں کی تعلیم سے بھی زیادہ اہمیت ہے کیونکہ ایک مرد کی تعلیم ایک فرد کی تعلیم ہوتی ہے جبکہ ایک لڑکی کی تعلیم ایک خاندان کی تعلیم ہوتی ہے۔اس لئے میری بچیوں سے گزارش ہے کہ وہ اپنی تعلیم پر بہت توجہ دیں۔انہوں کالج کی طالبات کی شاندار کارکردگی پر خوشی کا اظہار کیا۔انہوں نے کالج کو درپیش مسائل کے حل کا وعدہ کیا۔پینے کے صاف پانی کی کمی کے مسئلے کے بارے میں انہوں نے فوری اعلان کیا کہ کالج میں جتنے بھی الیکٹرک کولروں کی ضرورت ہے وہ اسی مہینے لگوادئے جائیں گے تاکہ طالبات کو پینے کا صاف اور ٹھنڈاپانی میسرآ سکے۔ان کے اس اعلان پر ہال زور دارتالیوں سے گونج اٹھا۔انہوں نے کہا کہ صفائی کا خاص خیال رکھنا ضروری ہے،ہم نے شہر کی صفائی اور خوبصورتی کے لئے کام شروع کردیا ہے۔ہم میں سے ہر ایک اگر صرف اپنے اپنے گھر کا کوڑا نالیوں اور گلیوں میں پھینکنے کی بجائے شاپر میں ڈال کر کوڑا ڈالنے کی جگہ ڈال دے تو صفائی والا عملہ وہ کوڑا خود اٹھالے گا۔انہوں نے کہا کہ اپنے گھر،ادارے،دفتر وغیرہ کو صاف رکھنا ہمارا فرض ہے کیونکہ ہمارے دین اسلام نے ہمیں سکھایا ہے کہ “صفائی نصف ایمان ہے”۔
یوں یر وقار ئقریب قومی ترانے پر اختتام یزیر ہوئی۔مہمانان گرام کے لئے ریفرشمنٹ کا بھی خصوصی اہتمام کیا گیا تھا۔
رپورٹ:
رضیہ رحمان
صدر شعبہ اردو


2017-04-07

متعلق ویب ڈیسک