پاناما کیس کی جے آئی ٹی رپورٹ پرسماعت آج ہوگی

اسلام آباد : سپریم کورٹ میں آج پاناما کیس کی جے آئی ٹی رپورٹ پر سماعت ہوگی، درخواست گزار اور فریقین اپنے دلائل پیش کریں گے، سپریم کورٹ کے اطراف سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق پانامہ جےآئی ٹی کی رپورٹ کے بعد دوسرا راؤنڈ شروع ہونے کو ہے۔ سپریم کورٹ میں آج بڑے کیس کی سماعت ہوگی، جسٹس اعجاز افضل کی سربراہی میں پانامہ عملدر آمد بینچ آج جے آئی ٹی رپورٹ پر سماعت کرے گا۔

بینچ کی جانب سے درخواست گزاروں اور فریقین کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ جے آئی ٹی کی رپورٹ پر اپنے دلائل دیں گے۔ کیس سے متعلق پہلے سے دیئے گئے دلائل قابل قبول نہیں ہونگے۔

یاد رہے کہ جے آئی ٹی رپورٹ پیش ہونے کے بعد ساٹھ روز تک پانامہ کیس کی تحقیقات کرنے والی ٹیم کو تحلیل کردیا گیا تھا۔

علاوہ ازیں عدالت نے لیگی رہنماؤں کے جے آئی ٹی مخالف بیانات کا ریکارڈ بھی طلب کیا تھا، وزیراعظم نوازشریف اور دیگر لیگی رہنماؤں کی جانب سے جے آئی ٹی اور عدلیہ کی توہین سے متعلق درخواستوں کی سماعت بھی یہی تین رکنی بنچ کرے گا۔

سپریم کورٹ کے اطراف سخت حفاظتی انتظامات کر لیے گئے

پولیس حکام کے مطابق سپریم کورٹ اور ریڈ زون کو علی الصبح سیل کردیاجائے گا، عمارت کے اطراف اضافی خاردار تاریں بھی لگا دی گئیں ہیں، سپریم کورٹ،ریڈ زون میں دو ہزاراہلکارسیکورٹی پرمامور ہونگے۔

اس موقع پر پولیس کے ساتھ رینجرز کےاہلکار بھی تعینات ہونگے جبکہ اضافی نفری تھانہ سیکریٹریٹ اور تھانہ آبپارہ میں اسٹینڈ بائی رہے گی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ غیرمتعلقہ افراد کا ریڈ زون اور سپریم کورٹ میں داخلہ بند ہوگا جبکہ وکلاءاور میڈیا کے نمائندے عمارت میں داخل ہو سکیں گے۔



واضح رہے کہ  پاناما جے آئی ٹی رپورٹ منظر عام پر آنے کے بعد تحریک انصاف سمیت اپوزیشن جماعتوں نے نوازشریف سے استعفیٰ دینے کا مطالبہ کررکھا ہے ۔

دوسری جانب مسلم لیگ ن نے جے آئی ٹی رپورٹ کو مضحکہ خیز اور بے بنیاد قرار دیتے ہوئے سپریم کورٹ میں چیلنج کرنے کا فیصلہ کیا ہے جبکہ نوازشریف نے بھی وزارتِ عظمیٰ کے عہدے سے مستعفیٰ نہ ہونے کا فیصلہ کیا ہے۔

Print Friendly

متعلق نامہ نگار