سعودی عرب سے ایک لاکھ سے زائد پاکستانیوں کو نکالنے کا کام شروع

غیر قانونی طور پر مقیم ایک لاکھ 6ہزار 965پاکستانیوں کو 2ماہ کے اندر واپس بھجوایا جائے گا
اسلام آباد (آن لائن) سعودی عرب سے ایک لاکھ سے زائد پاکستانیوں کو ملک بدر کرنے کے احکامات پر عملدرآمد شروع ہوگیا۔ اوورسیز پاکستانی فائونڈیشن کی جانب سے جاری ہونے والی دستاویزات کے مطابق سعودی عرب کی حکومت نے غیر قانونی طور پر مقیم غیر ملکیوں کو نکالنے کے لیے ایمنسٹی اسکیم شروع کی ہے جس کے تحت مجموعی طور پر ایک لاکھ 6 ہزار 905 پاکستانی جو غیر قانونی طور پر سعودی عرب میں مقیم تھے اگلے 2 ماہ کے اندر واپس پاکستان بھجوائے جائیں گے۔ دستاویزات کے مطابق اس سلسلے میں سعودی عرب کے شہر ریاض اور جدہ میں واقع پاکستان مشنز میں اطلاعات کائونٹر قائم کردیے گئے ہیں جو سعودی عرب میں مقیم پاکستانیوں کو ایمنسٹی اسکیم سے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانے کے لیے معلومات فراہم کررہی ہے۔ دستاویزات کے مطابق سعودی عرب میں پاکستانی سفارتخانے کے حکام نے مختلف لیبر کیمپوں کے بھی دورے کیے ہیں اور پاکستانی مزدوروں کو اس سلسلے میں معلومات فراہم کی ہیں۔ پاکستانی سفارتخانے کی جانب سے مجموعی طور پر ایک لاکھ 12 ہزار 251 پاکستانیوں کو سہولیات فراہم کی گئی ہیں جن میں 78 ہزار 905 پاکستانیوں کو ایمرجنسی سفری دستاویزات جبکہ 28 ہزار پاکستانیوں کے پاسپورٹ میں تجدید کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔

متعلق امتیاز کاظمی