ملکی زر مبادلہ ذخائر میں کمی کرنسی مارکیٹ میں امریکی ڈالر کی خریداری میں غیر معمولی اضافہ

بڑے سرمایہ کار ڈالروں کی خریداری کیلئے میدان میں آگئے، فاریکس کمپنیاں محتاط نظر آنے لگیں
چند ہفتوں میں بڑی تعداد میں روپے کے بینک کھاتے غیر ملکی کرنسی کھاتوں میں تبدیل کرائے گئے
کراچی (کامرس ڈیسک) ملکی زرمبادلہ ذخائر میں کمی سے اوپن کرنسی مارکیٹ میں امریکی ڈالر کی خریداری میں غیر معمولی اضافہ ہوگیا ہے۔ مالیاتی ماہرین اور منی چینجرز کا کہنا ہے کہ گزشتہ دو ماہ سے ڈالر کی خریداری بتدریج بڑھ رہی ہے جس کی بنیادی وجوہ میں ڈالر کے مقابلے میں سرکاری سطح پر روپے کی قدر میں کمی اور پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں جاری مندی کا رجحان ہے۔ ایک منی چینجر کا کہنا ہے کہ عیدالاضحی سے کافی پہلے حج سیزن شروع ہونے پر ڈالر اور ریال کی خریداری میں تیزی آتی ہے اور عیدالاضحی کے بعد خریداری معمول پر آجاتی ہے مگر رواں سال عیدالاضحی کے بعد بھی امریکی ڈالر کی خریداری کا رجحان نہ صرف جاری ہے بلکہ اس میں تیزی آرہی ہے۔ فاریکس کمپنیاں اس سلسلے میں ہمیشہ محتاط رہتی ہیں اور ڈالر کی خریداری کا رجحان بڑھنے نہیں دیتیں لیکن بڑے انویسٹرز زیادہ تر غیر قانونی منی چینجرز سے ڈالر کی خریداری کرتے ہیں جو بڑی رقومات کے ڈالر بھی فراہم کردیتے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ڈالر کی شرح مبادلہ میں متوقع کمی کا اشارہ اس امر سے بھی ملتا ہے کہ پچھلے چند ہفتوں میں بڑی تعداد میں روپے کے بینک کھاتے غیر ملکی کرنسی کھاتوں میں تبدیل کرائے گئے ہیں۔ مارکیٹ کی اطلاعات کے مطابق ستمبر 2017ء میں اوپن کرنسی مارکیٹ سے سب سے زیادہ ڈالروں کی خریداری کی گئی ہے۔

متعلق ناصر عباس