سرکاری پروٹوکول: سابق وزیراعظم اورمریم نواز کو نوٹس جاری

لاہور: ہائی کورٹ نے میاں نواز شریف اور مریم نواز کے پروٹوکول استعمال کرنے کے خلاف دائر درخواست سماعت کے لیے منظور کرتے ہوئے  سابق وزیراعظم اور مریم نواز سمیت فریقین کو نوٹس جاری کردیے۔

تفصیلات کے مطابق آج بروز جمعہ لاہور ہائی کورٹ میں جسٹس شاہد کریم نے پاکستان تحریک ِ انصاف کی رہنما عندلیب عباس کی جانب سے دائر درخواست کی سماعت کی ۔

درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ میاں نواز شریف کو سپریم کورٹ نے نااہل قرار دیا‘ مگر نااہلی کے باوجود سابق وزیراعظم سرکاری پروٹوکول استعمال کر رہے ہیں ۔ درخواست میں یہ بھی کہا گیا کہ میاں نواز شریف اور مریم نواز کی پیشیوں پر اب تک 218 ملین روپے خرچ ہوئے جو قومی خزانے کا ضیاع ہے ۔

عندلیب عباس کی جانب سے دائر کردہ درخواست میں یہ بھی کہا گیا کہ میاں نواز شریف نااہل ہونے کے باوجود پنجاب ہاوس میں سرکاری اجلاسوں کی صدارت کرتے ہیں جو قانون اور سپریم کورٹ کے فیصلے کی کھلی خلاف ورزی ہے لہذا عدالت پروٹوکول واپس لینے اور میاں نواز شریف کی سرکاری اجلاسوں میں شرکت روکنے کا حکم دے ۔

عدالت نے درخواست پر نوٹس جاری کرتے ہوئے نواز شریف ، مریم نواز ، وفاقی اور صوبائی حکومت  سمیت فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا۔

یاد رہے کہ دو روز قبل احتساب عدالت میں نا اہل وزیراعظم کی پیشی کے موقع پر نوازشریف کا قافلہ سخت سیکیورٹی حصارمیں احتساب عدالت پہنچایا گیا‘ اس موقع پر کارکنان نے گاڑی کو گھیرے میں لے لیا اور ان کی حمایت میں نعرے بازی کی۔اس موقع پر وفاقی وزرا بھی کارکنان سے پیچھے نہیں رہے اور نا اہل وزیر اعظم کی پیشی کے موقع پر پیشی کو یقینی بنایا ۔

اس سے قبل وطن واپسی کے موقع پر اسلام آباد ایئر پورٹ سے نااہل نوازشریف کا قافلہ جب ائیرپورٹ سے باہر نکلا تو شاہانہ انداز میں ایک یا دو نہیں پوری چھپن گاڑیاں ان کے آگے پیچھے تھیں۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئرکریں۔

Print Friendly, PDF  Email

متعلق نامہ نگار